وزیراعظم کا شکریہ. پس چہ باید کرد

طاہر علی خان

images.jpg

وزیراعظم میاں محمد نواز شریف کل جے آئی ٹی کے سامنے پیش ہوئے۔

ان کا یہ فیصلہ سراہا جانا چاہئے کہ یہ ملک میں قانون کی بالادستی اور قانون کے سامنے سب کی برابری کے لیے ایک اہم پیش رفت ہے۔

میاں محمد نواز شریف اگر چاہتے تو بطور وزیر اعظم آئین پاکستان کے آرٹیکل 148 کے تحت اپنی وزارت عظمیٰ کے دوران ان کو قانونی کارروائی سےحاصل استثنیٰ سے فائدہ اٹھا کر جےآئی ٹی کے سامنے پیشی سے انکار کر سکتے تھے۔ اگر وہ ایسا کرتے تو قانونی طور پر ایسا کرنا غلط نہ ہوتا۔

وزیر اعظم اگر چاہتے تو جےآئی ٹی کو تفتیش کر لینےیا گواہی لینے کے لیے وزیراعظم ہاؤس بھی طلب کر سکتے تھے جس طرح سابق وزیراعظم سید یوسف رضا گیلانی نے نیب کی تفتیشی ٹیم کے سمن کے جواب میں آئینی استثنیٰ کی بنیاد پر پہلے پیش ہونے سے انکار کیا اور پھر انہیں وزیراعظم ہاؤس طلب کرکے ان کے سوالات کے جوابات دئیے تھے. تاہم انہوں نے یہ

.سہولت بھی نہ لی

ان کے مخالفین کہتے ہیں ان کے پاس سوائے حاضری کے کوئی دوسرا آپشن نہیں تھا کیونکہ ان کے مبینہ کرپشن پر ان سے پوچھ گچھ کی جسنی تھی لیکن وہ بھول جاتے ہیں کہ وزیر اعظم بطورملزم نہیں بلکہ بطور گواہ بلائے گئے تھے.

 

پانامہ لیکس میں اگرچہ ان کا نام براہ راست شامل نہیں تھا تاہم انہوں نے اس معاملے کے منظر عام پر آتے ہی خود کو احتساب کے لیے پیش کر دیا تھا اور ایک کمیشن کے قیام کی پیشکش کرتے ہوئے سپریم کورٹ کو اس کے لیے خط بھی لکھ دیا تھا لیکن ان کے مخالفین اس وقت ان کے استعفیٰ کا مطالبہ کرتے رہے اور کافی وقت گزرنے کے بعدجے آئی ٹی کے لیے تیار ہوئے۔ اگر وہ وقت پر اس کے لیے راضی ہوئے ہوتے تو اب تک یہ فیصلہ ہو چکا ہوتا۔ وزیراعظم کی اس طرح قانون کے سامنے خود کو ایک عام شہری کی طرح پیشی کے بعد دوسرے رہنماؤں کو بھی عدالتوں کے سامنے پیشی سے راہ فرار کی عادت اب ترک کر دینی چاہیے.اس کے بعد لازم ہے کہ ان تمام دیگر لوگوں, جن کے نام پانامہ لیکس میں آئے تھے, کے خلاف بھی اسی طرح قانون کو حرکت میں آجانا چاہیے جس طرح کی تیزی وزیراعظم کے خلاف نظر آتی رہی ہے۔وزیراعظم کی اس پیشی کے بعدان دوسرے سیاسی و غیرسیاسی رہنماؤں اور عناصر کو بھی عدالتوںاور تفتیشی اداروں کے سامنے پیش ہو کر اپنی بےگناہی ثابت کر نی چاہیے۔وزیراعظم کےساتھ نہ نرمی ہونی چاہیے نہ خصوصی سختی. تاہم کہا جا سکتا ہے کہ عدالت عظمیٰ کی نگرانی میں جس طرح تفتیش آگے بڑھ رہی ہے اس سے یقین کیا جاسکتا ہے کہ میرٹ اور انصاف کی بنیاد پر ہی انکے مقدمے کا فیصلہ ہو گا نہ کہ عوامی خواہشات اور توقعات کی بنیاد پر۔ اگرچہ عمران خان صاحب سمجھتے تھے وزیراعظم اگر استعفیٰ نہیں دیتے تو ان کے ماتحتوں پر مشتمل جےآئی ٹی ان سے صحیح تفتیش نہیں کر سکے گی لیکن جس طرح تفتیش کار کسی کے عہدے اور مالی و سماجی رتبے سے قطع نظر اپنا کام کر رہے ہیں حقیقت یہ ہے ان کی بات غلط ثابت ہو گئی ہے ۔تاہم وزیراعظم اور ان کے خاندان کو یاد رکھنا چاہیے کہ وہ، جے آئی ٹی کو یا اس کے کام کو متنازعہ بنا کر وہ کوئی فائدہ حاصل تو کیا کریں گے الٹا اپنا بھی نقصان کریں گے اورملک میں جمہوریت اور آئین و قانون کی بالادستی کو بھی خطرے سے دوچار کر دیں گے۔اس کے لیے لازم ہے کہ وہ اپنے ترجمانوں اور رہنماؤںو کارکنوں کی زبانوں اورجذبات کو لگام دیں۔

 

Kindness Revolution

Kindness Revolution

By Tahir Ali Khan

http://daanish.pk/7237/

images6

With rampant corruption, poverty, terrorism, extremism, intolerance and self-centredness making life difficult and miserable for most of the humans and animals in the world, it is high time a Kindness Revolution is seen here.

We all wish that we and our family members, relatives and friends live a life full of love, peace and ease. We also want our country and the world to be peaceful and pleasant.

It’s indeed good to aspire for these ideals but if there is no corresponding commitment to do something for the purposes, we won’t have the cherished environment.

Remember that the difference between what is impossible and what is possible to achieve is the extent to which we are committed and determined to achieve our goals.

And remember that to make the world a lovely and pleasant place, every man and woman has got to fulfil his/her responsibilities in this regard. We will have to start a kindness process ourselves today. This surely will result in a kindness revolution.

Here are a few steps that anyone can take and which can help make the world a better abode for all of us and other creatures.

  1. Be courteous to all. Meet everyone with a smile on your face. Try to be of ease and mercy for others. Deal all with honesty, tenderness, tolerance and spirit of sacrifice.images
  2. Love to all and hatred for none should be your motto. Kick hatred, vengeance and self-interest out of your heart and you will be safe from lots of problems.
  3. Offer gifts to anyone who looks hungry or needs/asks for it.
  4. If Allah has been kind to you, you must help the poor on regular and permanent basis. Feeding them, buying them clothes, financing their treatment or educating them could be some of its shapes. Make it your habit to offer this support to your relatives, neighbours or strangers.
  5. Try to help the needy and the poor. Feed, clothe and educate them. Give permanent support to a few needy families. Try to reduce the burden of the people by guiding them, lifting or carrying their luggage, searching for things, crossing of roads or climbing up and so on.
  6. Never ridicule others. Respect all.images1
  7. Give preference to others over yourselves. Sacrifice your ease for others. Offer your seat to ladies or elders who are standing in public transport. Let others stand or go before you in lines. Share your umbrella with others when it rains. Offer lifts to the needy, children and ladies in good faith.
  8. Be patient and tolerant especially when others are harsh to you. It is indeed real nobility.
  9. Visit hospitals, old age centres, orphanages and Darulkifalas. Talk to the inmates there. Listen to them. Help them in every possible way and also urge others.
  10. Assist both your permanent and temporary neighbours (companions in journey etc) and permanent ones when they need or request for it.
  11. Value and extol good habits, words and conduct.
  12. Always be the first to greet. Don’t wait for others to talk to you first.
  13. Give praise, respect, gifts and attention to others without any expectation of the same.
  14. Contact your friends, relatives, teachers, elders and youngsters through call, messaging or letters. Give them importance. They will surely feel inclined towards you more.
  15. Respect, facilitate and love your subordinates like all noble persons.
  16. Invite your relatives, neighbours and job colleagues every regularly even if at a cup of tea or glass of juice.
  17. Be a good listener. Listen intently. Talk on your turn and if after others finish speaking.
  18. Talk gently and properly. Your words and manner must both be proper. Your voice should neither be too feeble nor loud. Turn your whole body to the person who you talk to. Looking sideways while talking displays arrogance or lack of courage. Avoid this.images3
  19. Avoid suspecting others as far as possible. Always think positively when thinking of the person, character and faith of others.
  20. If you are an employee, try to perform your duties with utmost devotion and honesty. Treat the visitors and applicants well. Give them a good smile and try to help them out.
  21. Give maximum time and enjoy your company with friends, family members and the people at hand. Give them enough attention and respect. No noble person could be expected to keep messaging distant friends but ignore those sitting beside him at present.
  22. Never sever relations with friends or relatives or show haughtiness and indifference to them. Always be prepared to clarify if they feel annoyed. But always remember to ignore their faults. Be a source of unity and never of disarray.
  23. Anger, malice, backbiting and self-centredness cut down love and brotherhood. Avoid them. Don’t say anything about someone which you could hardly tolerate yourselves from their side.A-man-giving-a-homeless-woman-his-shoes
  24. Readily accept a mistake if you commit one. Get rid of the habit of blaming others for a problem, failure or hardship. If you find others to be harsh, emotional, intolerant and unjust and you see that your response could make things worse, show patience. Keeping quiet or talking softly and sweetly is a sure recipe of keeping peace, relationships and love.
  25. Keep quiet in anger and control your senses and response. You must always be inclined to know and respect what others feel. Love empathy.
  26. Love the children. Confront them with a smile in neighbourhood, market, park and pathways. Greet them. Give them toffees when you meet them.images4
  27. Alms giving surely help remove problems and ensure prosperity. Spend at least one percent of your income on the poor and needy. But please spend carefully. A portion of your charity must be apportioned for those relatives, neighbours and strangers who don’t ask for charity but appear entitled even to a layman.
  28. Instead of making videos on mobile when there is an accident or bomb blast, try to take the injured to the hospital, inform the police or their relatives and emergency rescue services.
  29. Raise your voice for the illiterate children, orphans, widows, the sick, minorities, the beggars and the poor and against aerial firing, drugs and other social evils.
  30. Be a friend of environment. Work for green and clean atmosphere. Create awareness on tree plantation and conservation of flora. Also love animals. Provide the ants, birds and other animals with ease and food in your home and neighbourhood.

    images5

کلبھوشن، ویانا کنونشن اور اقوام متحدہ کا چارٹر

کلبھوشن، ویانا کنونشن اور اقوام متحدہ کا چارٹر

طاہرعلی خان

http://daanish.pk/6971/

بین الاقوامی عدالت انصاف کی طرف سے کلبھوشن یادیو کیس میں عبوری فیصلے پر پاکستان میں لوگ اپنی سمجھ بوجھ اور سیاسی وابستگی کی روشنی میں تبصرے کر رہے ہیں۔ کوئی اسے جندال کے دورے سے جوڑ رہا ہے، کسی کے خیال میں پاکستانی وکلاء ٹیم کی کارکردگی مایوس کن تھی، کوئی کہتا ہے پاکستان کووہاں جانا ہی نہیں چاہیے تھا اور کسی کے مطابق بین الاقوامی عدالت انصاف کے فیصلے ماننا لازم نہیں اس لئے کلبھوشن کو فوراً پھانسی چڑھالینا چاہیے۔

پاکستانی وکلاء کی عالمی عدالت میں کارکرگی اور وزیراعظم نواز شریف اوران کے دوست بھارتی تاجر سجن جندال کی ملاقات سے اس کو جوڑنے والے نکات پر ایک سے زیادہ رائے ہو سکتی ہیں۔

اقوام متحدہ کے چارٹر کی دفعہ ۹۴ کے مطابق بظاہر اس بات میں وزن دکھائی دیتا ہے کہ پاکستان کے پاس یہ اختیار تھا کہ وہ عالمی عدالت نہ جاتا تو پھر اس کا فیصلہ ماننے کا پابند نہ ہوتا۔ اب چونکہ دانستگی یا نادانستگی میں پاکستان عالمی عدالت میں چلا گیا ہے اس لیے اس پر مزید بات کرنے کا کوئی فائدہ نہیں تاہم آخری نکتہ کہ عالمی عدالت کے فیصلے بائینڈنگ نہیں اس لیے اب کلبھوشن کو پھانسی دے دینی چاہیے، متعلقہ قوانین اور بین الاقوامی ذمہ داریوں سے واضح لاعلمی پر مبنی ہیےاس لیے اس کی وضاحت ضروری ہے۔

اقوام متحدہ کے چارٹر کی دفعہ ۹۴ کےالفاظ یہ ہیں۔ ‘‘اقوام متحدہ کا ہر ممبر وعدہ کرتاہے کہ وہ ہر اس کیس میں عالمی عدالت انصاف کے فیصلے پر عمل کرےگا جس میں وہ فریق ہے۔ اگر کیس کا کوئی فریق عالمی عدالت کے فیصلے کے تحت عائد ذمہ داریوں کو پورا کرنے میں ناکام ہوجاتا ہے تو دوسرا فریق سیکورٹی کونسل سے رجوع کر سکتا ہےجو اگر ضروری سمجھے تو فیصلے پرعمل درآمد کے لئے سفارشات تجویز یا اقدامت کا فیصلہ کرسکتا ہے۔’’ چارٹر کی اس دفعہ کا انگریزی متن یہ ہے۔

UN Charter Article 94

  1. Each Member of the United Nations undertakes to comply with the decision of the International Court of Justice in any case to which it is a party.
  2. If any party to a case fails to perform the obligations incumbent upon it under a judgment rendered by the Court, the other party may have recourse to the Security Council, which may, if it deems necessary, make recommendations or decide upon measures to be taken to give effect to the judgment.

یہ بات تو واضح ہے کہ اب اس فیصلے سے روگردانی ممکن نہیں کیونکہ پاکستان امریکہ جیسی طاقت نہیں رکھتا جس نے کم ازکم دو مرتبہ عالمی عدالت کے اسی طرح کے فیصلوں کے باوجود ملزموں کو پھانسی چڑھا دیا تھا اور کوئی اس کا کچھ نہ بگاڑ سکا تاہم پاکستان کے پاس راستہ کھلا ہے کہ وہ عالمی عدالت سے کلبھوشن کیس کا حتمی فیصلے اپنے حق میں کروانے کے لیے خوب تیاری کرے۔ اس کے لیے چند نکات پیش خدمت ہیں۔

ہندوستان نے ویانا کنونشن کی دفعہ ۳۶ کی روشنی میں پاکستان پر کلبھوشن تک قونصلر رسائی نہ دینے اوراسکی گرفتاری سے بروقت مطلع نہ کرنے پر مقدمہ کیا اور آفشنل پروٹوکول کے آرٹیکل ۱ کی بنیاد پر مطالبہ کیا تھا کہ عالمی عدالت انصاف ویانا کنوشن کے مفہوم اور اطلاق سے پیدا ہونے والے تنازعات پرچونکہ فیصلے دینے کا لازمی دائرۂ اختیار رکھتا ہےا س لیے وہ کلبھوشن کے مقدمے کو سنے تاہم پاکستان نے کہا کہ بھارت اور پاکستان کے مابین ۲۰۰۸ میں قونصلر رسائی کا ایک معاہدہ ہوا تھا جس کی دفعہ ۶ کے مطابق سیاسی اور سیکورٹی بنیادوں پر گرفتاری، حراست اور سزا کی صورت میں ہر ریاست کو کیس کی میرٹ پر خود فیصلہ کرنے کا اختیار دیا گیا ہے۔

دیکھنا یہ ہے کہ آیا ۲۰۰۸ کا یہ پاک بھارت معاہدہ اقوام متحدہ کے چارٹر کے آرٹیکل۱۰۲ کے شق ا کے مطابق اقوام متحدہ کے ساتھ رجسٹرڈ کیا گیا تھا یا نہیں۔ اگرہاں تو پھر پاکستان کا کیس مضبوط ہے تاہم اسے یہ ثابت کرنا ہوگا کہ کلبھوشن ایک غیرقانونی مداخلت کار اور جاسوس ہے۔ اگریہ رجسٹرڈ نہیں تو اسی آرٹیکل کے شق ۲ کے مطابق اقوام متحدہ کے کسی عضو کے سامنے ایسے کسی معاہدے سے مدد نہیں لی جا سکتی۔

انڈیا نے اگر یہی لائن لے لی تو پھراگر پاکستان کشمیر میں بھارتی فورسز کے ہاتھوں انسانی حقوق کی پامالیوں پرعالمی عدالت انصاف میں کیس کرلیتا ہے تو انڈیا بھی شملہ معاہدے کی آڑنہیں لے سکے گا کہ یقیناً یہ بھی اقوام متحدہ کےساتھ رجسٹرڈ نہیں کیا گیا ہوگا۔

تاہم ویانا کنونشن کے آپشنل پروٹوکول کے آرٹیکل ۱سے پہلے چند الفاظ آئے ہیں جن کی بنیاد پر پاکستان اپنا کیس بنا سکتاہے۔۔‘‘جب تک ایک معقول وقت کے اندر فریقین تصفیہ کی کسی اور شکل پرمتفق نہ ہوں، وہ کنوشن کی تفہیم یا اطلاق سے پیدا ہونےکسی بھی تنازع پر بین الاقوامی عدالت انصاف سے رجوع کرنے کی خواہش کا اظہارکرتے ہیں’’۔ یہ معقول وقت کیاہے اور تصفیہ کی اور شکلیں کیا ہیں؟ اور یہ کہ اس کے بغیر کیا کوئی فریق براہ راست عالمی عدالت میں جا سکتا ہے؟

اس کنونشن کے آرٹیکل ۲ کے مطابق‘‘فریقین چاہیں، تواس کے بعد کہ ایک فریق نے دوسرے کو اطلاع دے دی ہو کہ تنازع موجود ہے، دو مہینے کے اندر اندر عالمی عدالت نہیں بلکہ کسی ثالثی ٹریبیونل سے رجوع کرنے پر متفق ہو جائیں۔ اس مدت کے اختتام پر کوئی بھی فریق ایک درخواست سے اس تنازع کو عالمی عدالت میں لا سکتا ہے’’۔

اس کنونشن کے آرٹیکل ۳ کے ذیلی شق ۱کے مطابق اسی دو مہینے کی مدت میں فریقین چاہیں تو عالمی عدالت سے رجوع کرنے سے پیشتر اصلاح و تصفیہ کے کسی طریق کار پر رضامند ہوں۔ شق دو کے مطابق یہ مفاہمتی کمیشن اپنی تقرری کے پانچ ماہ کے اندر اندر اپنی رپورٹ دے گا۔ اگر اس کمیشن کی سفارشات کو کوئی فریق دو ماہ کے اندر اندر قبول نہ کرے تو دوسرا فریق ایک درخواست کے ذریعے عالمی عدالت کے سامنے یہ تنازعہ لاسکتا ہے۔ دیکھنا یہ ہے کہ عالمی عدالت میں جانے سے قبل یہ شرائط ہندوستان نے پوری کی تھیں۔ کیا اس نے پاکستان کے ساتھ کسی ٹریبیونل یا مفاہمتی کمیشن کے لئے بات کرنے کی خواہش اور کوشش کی تھی؟ اگر نہیں تو وہ اس کنونشن کے تحت براہ راست رجوع کرنے کا حق نہیں رکھتا اور پاکستان کو پرزور انداز میں یہ دلیل پیش کرنی چاہیے۔

پاکستان کہتا ہے کلبھوشن ایک جاسوس ہے جو دہشت گردی کرانے غیرقانونی طریقے سے بھیس بدل کر پاکستان میں داخل ہوا تھا اور اسے ویانا کنونشن کے تحت حقوق نہیں دیے جا سکتے جبکہ انڈیا اسے ایک بےگناہ ہندوستانی گردانتا ہے جس کو قونصلر رسائی اور قانونی امداد کے حقوق حاصل ہیں۔ اب ایک طرف ویانا کنونشن ہے اور دوسری طرف اقوام متحدہ کا چارٹر جو دوسرے ممالک کے اقتداراعلیٰ اور سالمیت کے احترام اور ان کے اندرونی امور میں مداخلت کی اجازت نہیں دیتا۔ ایک طرف ہندوستان کی ویانا کنونشن کے تحت ذمہ داریاں ہیں اور دوسری طرف اقوام متحدہ کے تحت۔ ان میں کس کو فوقیت دی جائیگی؟ اقوام متحدہ کے چارٹر کے آرٹیکل ۱۰۳ کا اس سلسلے میں فیصلہ یہ ہے۔ ‘‘اقوام متحدہ کے ارکان کی اس موجودہ چارٹر یا کسی دوسرے بین الاقوامی معاہدے کے تحت ذمہ داریوں پر کوئی اختلاف واقع ہو جائے تو اس چارٹر کی تحت ان کی ذمہ داریوں کو فوقیت حاصل رہے گی۔’’

کیا اقوام متحدہ کا چارٹر عالمی ادارے کے ممبران کو ایک دوسرے کے اندر مداخلت یا جاسوسی کرنے یا ایسا کرنے والوں کی مدد یا پشت پناہی کی اجازت دیتا ہے؟

Writer’s intro

طاہرعلی خان فری لانس صحافی ہیں، رواداری ، احترام انسانیت اور امن کے پرچارک ہیں اور ان مقاصد کے حصول کے لیے ۔    کے نام سے بلاگ بھی رکھتے ہیں ۔ www.tahirkatlang.wordpress.com لکھتے ہیں. وہ

ردعمل یا صبر و حکمت؟

ردعمل یا صبر و حکمت؟

چند مہینے پیشتر پی ٹی وی ہوم پر ایک ڈرامہ چلا تھا۔ ایک لڑکی، جو ڈرامےکا مرکزی کردار تھی، کے رشتے کے لئے ایک عورت، اس کا شوہراور بیٹا آئے ہوئے تھے۔ لڑکی انہیں پسند آئی، اس کے بعد لڑکے کی ماں نے دبے لفظوں میں جہیز کا تقاضا کیا۔ لڑکی، جو کچھ فاصلےپر کھڑی یہ باتیں سن رہی تھی، اس پر بھڑک اٹھی اور اس نےاپنے ماں باپ کی موجودگی کو بالائے طاق رکھتے ہوئے اس عورت سے کہا ’’معاف کیجئے آپ کو اپنے بیٹے کے لئے بیوی چاہیے یا گھر کےلئے جہیز؟ ‘‘۔ پھر اس نے کھڑےکھڑےفیصلہ سنا دیا کہ وہ کسی ایسے گھر میں شادی نہیں کرے گی جو جہیز مانگے گا۔ اور پھر انہیں درشت لہجے میں فوراً چلے جانے کو کہا۔ لڑکے لڑکی دونوں کے والدین حیران ایک دوسرے کا منہ تکنےلگے۔ لڑکے کی ماں اٹھی تو لڑکے نے اسے بٹھا دیا اور اپنافیصلہ سنا دیا کہ وہ اسی لڑکی سےہی شادی کرے گا۔ پھر شادی ہو گئی، لڑکا لڑکی نے چند روز ہنسی خوشی سے گزارے۔ پھر بہو ساس کی روایتی ان بن ہو نے لگی مگر لڑکے کی ماں اگر ایک بات سناتی تو ’نڈر اور حق گو‘ لڑکی بھی دو بدو جواب دیتی۔ لڑکی کی تیزی کی شکایت ماں نے بیٹےسےکردی اور اس نے بیوی سے شکایت کی تو ’’حق گو صاحبہ‘‘ یہاں بھی خوب برسی اور اپنی بے گناہی کا رونا روتی رہی۔ مرتا کیا نہ کرتا شوہر برداشت اور خوش اخلاقی کی تلقین کرتا چلا گیا۔

اس کے بعد بھی کئی دفعہ ساس بہو کےدرمیان چپقلش ہوئی اور لڑکی ساًس کے ساتھ تیزی اور بے ادبی کا مظاہرہ کرتی رہی۔

ایک روز لڑکی کی ساس کے ساتھ حسب دستور توتو میں میں جاری تھی کہ بیٹا اندر آیا۔ ماں اسے دیکھ کر چپ ہو گئی مگر بیوی کی شوہر کی طرف پشت تھی، وہ اسے دیکھ نہ پائی اور وہ ساس کے ساتھ غصے میں بات کرتی رہی۔ کچھ دیر بعد بیٹا سامنے آیا اور اس نے اپنی ماں کے ساتھ بیوی کے رویے پر افسوس کا اظہار کیا تو لڑکی نے اپنی باتوں کی صفائی دینی چاہی اور معذرت کرنے سے انکار کر دیا۔ شوہر کے ساتھ بھی اس کا لہجہ سخت تھا اور جب شوہر نے اس کو کہا کہ وہ اپنا رویہ درست کرے ورنہ اسے میکے چلےجانا ہوگا تو اس نے اپنی ماں باپ کی عزت پر کوئی سمجھوتہ کرنے سے انکار کرتے ہوئے گھر جانے کا فیصلہ کر دیا۔

نئی نویلی دلہن بیٹی اکیلے گھر لوٹ آئی تو ماں باپ رونے دھونے لگے۔ وہاں لڑکی کا کوئی دور کا کزن اس وقت موجود تھا، اسے بھی ایک ایسی ہی لڑکی کا انتظار تھا چنانچہ اس نے لڑکی کو شریک حیات بنانے کا فیصلہ کر دیا۔ ڈرامہ یوں ہنسی خوشی ختم ہو گیا۔

اس ڈرامے کے محاسن و نقائص پر بات کر نےسے پہلے چند ضروری گزارشات پیش خدمت ہیں۔

1۔ اسلام نے شادی کے وقت مرد و عورت دونوں کو انتخاب کاحق دیا ہے اور شادی کے وقوع کےلئے دونوں کی رضامندی کو بنیادی شرط قرار ډیا ہے۔

:2اسلام رشتوں ناتوں کو جوڑنے اور انہیں توڑنے سے اجتناب کی ہدایت کرتا ہے اور رشتے ناتے توڑنے والے کو جنت سے محروم قرار دیتا ہے۔ ناچاقی کی صورت میں مرد کو طلاق جبکہ عورت کو خلع کا حق حاصل ہے۔ تاہم رشتوں کو قائم رکھنے کے لیے اسلام طلاق کو جائز مگر ناپسندیدہ عمل گردانتا ہے۔

:3 اسلام شوہر اور بیوی دونوں کو باہمی محبت، برداشت، احترام اور وفاداری کی تلقین کرتا ہے۔

4۔ اسلام معاشرتی میل جول اور خانگی زندگی دونوں میں برداشت، رواداری، خوش اخلاقی اور عفو و درگزر کا درس دیتا ہے۔

5۔ جہیز اپنی حیثیت کے مطابق دینی چاہیے اوراس کی بنیاد پر رشتہ کرنا یا توڑنا ایک قبیح عمل ہے جس کی ایک شریف آدمی سے توقع نہیں کی جا سکتی۔ اللہ اور اس کا رسول اس ظلم سے بری ہے کہ جہیز نہ ہونے کی وجہ سے قوم کی بیٹیاں تجرد کی زندگی گزارنے پر مجبور ہوں۔

آئیےاب اس ڈرامے پر بات کرتےہیں۔ اس ڈرامے کے پلاٹ میں موجود چند بنیادی نقائص ( جیسے ڈرامے میں دګھائےجانے والے مفلس خاندان میں لڑکے کا رشتے سے پہلے ہی ماں باپ کےساتھ رشتہ کرنے لڑکی کےگھرجانا، لڑکی کی وہاں باتوں میں مداخلت اور آخر میں طلاق و عدت کے بغیر ہی دوسری شادی کے لئے راضی ہونا وغیرہ) کے علی الرغم ڈرامہ نگار نے قوم کی بیٹیوں کو جو تعلیم دی ہے اس کا خلاصہ یہ ہے۔

’’جہیز ایک لعنت ہے، اس سے نجات کےلئےلڑکیوں کواپنے معاملات اور فیصلے اپنے ہاتھوں میں لینے ہوں گے، صبر و برداشت کی جگہ ردعمل اورانتقام کو طرزعمل بنانا ہوگا، خوش اخلاقی اور اطاعت کی بجائےوالدین کی نافرمانی اور بزرگوں سےگستاخی کوشعار بنانا ہوگا۔ انہیں اس بات کو بھی یقینی بنانا ہوگا کہ شرافت کی بجائے دھونس سے کام لیں تاکہ کوئی ہر کوئی ان سے ڈرے۔ ساس سے دب کر بات کرنے کی بجائے اسے دو بدو جواب دیں۔ ایسا کرتے ہوئےانہیں اس اندیشے میں نہیں پڑنا چاہئیےکہ یہ رشتہ ٹوٹ گیا تو پھر ان کا ہاتھ تھامنے والا کوئی نہیں ہوگا۔ بلکہ وہ جیسے ہی اس رشتے کوتوڑ دیں گی، انہیں نئے رشتے فوراً مل جائیں گے۔ ‘‘

ڈرامےمیں جس طرح دکھایاگیا عملی زندگی میں ویسا کہاں دیکھنے میں آتا ہے۔ جب لڑکی ماں باپ کے سامنے ہی گھر آئے ہوئے مہمانوں کی کلاس لےلے تو ایسی لڑکی کو کون بہو کے طورپہ قبول کرےگا؟ اس لڑکی کو زبان دراز اور گستاخ نہیں سمجھا جاتا کیا؟ ایسی لڑکی کو کوئی کیوں بہو بنا کر گھر میں آفت کی پوڑی لانے کی کوشش کرے گا، یہ بات سمجھ نہیں آئی۔

پھر ڈرامے میں جس طرح اس حق گو لڑکی کو ہر بار اس کی ‘حق گوئی‘ پر انعام دیا گیا کہ پہلی بدسلوکی کےباوجود لڑکے نے اس سے شادی کی اور پھر اس کے ساتھ جیسے ہی ناچاقی پیدا ہو گئی تو دوسرا لڑکا اسی وقت اس سےشادی کےلئے تیار ہو گیا ایسے اتفاقات کا عملی زندگی سے دور کا بھی کوئی واسطہ نہیں ہے۔

سوچئے اس ڈرامے کو دیکھنےوالی اور اس سے سبق لینے والی کوئی دختر ملت اس امید پر اپنا ایک رشتہ ختم کریگی کہ اسےمتبادل رشتہ فوراً مل جائے گا اور پھر ویسا نہ ہو تو وہ اپنی ناکامی اور تنہائی کی شکایت پھر کس سے کرے گی؟

ڈرامے میں جس طرح لڑکی کو بات بات پر غصے اور جذبات میں بات کرتے، بازپرس کرتے اور بات بات کا بتنگڑ بناتے دکھایا گیا اور اس پر اسے جیسا انعام ملنا دکھایا گیا اسے یقیناً بد خوئی، جذباتیت، اور عدم برداشت کی تبلیغ ہی سمجھا جائے گا نہ کہ جہیز کی بیخ کنی اور عورتوں کے حقوق کی حفاظت کی کوشش۔

میری ان معروضات کو اگر کوئی ان معنوں میں لے گاکہ میں عورتوں کو نکاح سے پہلے حق انتخاب کا منکر یا ان پر ظلم وجبر کا قائل ہوں تو یہ اس کی اپنی کج فہمی پر دلالت کرے گی۔ میں جو چاہتا ہوں وہ یہ ہےکہ یہ جہیزکی لعنت سے چھٹکارا حاصل کرنے اور عورتوں کی حقوق کی حفاظت کا کام بد تہذیبی اور ناشائستگی کے بغیر اور صبر و حکمت، خوش اخلاقی اور خدمت و احترام سے بدرجہا بہتر اندازمیں ممکن ہو سکتی ہے۔

قوم کی بیٹوں کو ردعمل اور انتقام کی راہ پر ڈالنے کے متمنی کیا نہیں جانتے کہ یہ راستہ رشتوں میں دائمی بگا ڑ اور تباہی پر منتج ہوتا ہے؟ یہ بات سمجھنے کےلئے عقل افلاطون نہبں چاہئیے کہ صبر کا پھل میٹھا ہوتا ہے۔ رشتوں کو قائم رکھنےکا آزمودہ نسخہ یہ ہے کہ ایک طرف سے اگر زیادتی ہو، جذباتی رویہ، عدم برداشت اور ترش خوئی سامنے آئے اور اس وقت جواب دینے سے بات مزید بگڑنے اور رشتےختم ہونے کا خدشہ ہو تو دوسرا فریق صبر و حکمت سے کام لے اور خاموشی اختیار کرلے۔

اختلاف اور لڑائی گھر کی ہو یا باہر کی اس کے ہنگام صبر سے کام لینا، خاموش رہنا اور میٹھےبول بولنا امن لانے، رشتوں کو قائم رکھنے اور دوستی و پیار قائم کرنے کا ایک بہترین اور یقینی راستہ ہے۔ اللہ تعالیٰ نے بھی قرآن مجید میں بتایا ہے لوگوں کےساتھ اچھی طرح بات کیاکرو۔ تم دیکھوگےکہ جن لوگوں کی تمھارےساتھ دشمنی و عداوت ہے وہ تمھارے جگری دوست بن جائیں گے۔

CIVIC SENSE

What is civic sense? Do Pakistanis have/lack civil sense? Why do Pakistanis lack civic sense? What is needed for promoting civic sense?

By Tahir Ali

The writer is an academic who blogs at www.tahirkatlang.wordpress.com and can be reached at tahir_katlang@yahoo.com

 

While being interviewed by a panel at the Federal Public Service Commission, I was, inter alia, asked these questions, “What do you understand by the term civic-sense? What are the causes of lack of civic sense in Pakistan and what are your suggestions for ensuring widespread civic sense in Pakistan?

I answered the questions and the subsequent counter questions put by the interviewers in detail.  I had then resolved to write a comprehensive article on the issue but the idea could not materialise for my pressing engagements. It might have delayed it further but an interaction with one of my friends last week pushed me to go for it.

Last week, the friend Islam Ghani visited me and in the course of our discussion, he told me. “Every day when I leave home for my office, I see the drainage system blocked by polythene bags/garbage because one of my neighbours is in the habit of sweeping out all his garbage into the drain. I often clean the drain myself. The person and his children usually see me doing that. I request them to be sensitive to the neighbours but to no effect. And last week, the person had this to tell me: “I have done that. Do what you want/can. Do you think my garbage was to lie in my house? Why don’t you approach the municipal workers to come and clean the mess instead of becoming sweeper yourself or asking me to?” says Islam Ghani.

Throwing out your garbage this way and the subsequent response by the guilty speaks a lot of our public morality and an acute lack of civic sense in our society, he adds.

WHAT IS CIVIC SENSE?

The word ‘Civic’ means of or related to a city or people who live there or the duties and responsibilities of citizens, and the word ‘Sense’ means sound practical judgement or awareness about something. The term, therefore, literally means an understanding of the way how people should live and behave in a society.

Civic sense is a consideration for the norms of society. It includes respect for the law and for the ease and feelings of others and maintaining etiquettes while dealing and interacting with others. For example, if we visit someone’s house, ethics demand that we knock at the door, ask for permission to go inside or that we avoid visiting someone at the time of meals or at bed/rest time.

It means we respect and help others, avoid spitting on roads, streets and public places, avoid listening to loud music, refrain from blowing pressure horns, adhere to traffic rules, obey laws, park vehicles at nominated places, avoid wall chalking, ensure economical use of the natural resources and public facilities, help reduce leakage/wastage/misuse of gas/water/electricity, pay taxes and utility bills, wait for our turn, be tolerant towards opposing views, respect minorities and ensure religious harmony and devote ourselves to welfare/community services.

One is considered to have Civic Sense if he is caring and sensitive towards the elderly, women, children, disabled persons, the poor, the needy, neighbours, companions, subordinates, officers, public and private property, the environment, the animals, natural resources, or in short is behaving better with everyone and everything everywhere. It is about keeping lane while driving, desisting from rash driving or from driving while not in senses, throwing garbage but in a dustbin or designated places and avoiding smoking at public transport/places.

DO PAKISTANIS HAVE or LACK CIVIC SENSE?

Pakistan has been abundantly bestowed with natural resources. It has a highly fertile land. It has plenty of water. Its people are very intelligent and hard-working who have proved their worth and competence in every corner of the world. But the lack of civic sense is tarnishing our image as a respectable nation in the comity of nations and making the country an inhospitable place for both humans and animals. Instead of utilising the abundant natural and physical resources with care, these are being destroyed/wasted with impunity.

Good manners are exceptionally important in life and at the workplace. Unfortunately, most Pakistanis lack civil sense. They generally spit here and there, throw litters on and dirty the roads/public parks/platforms, disturb others by playing high-pitched music; we don’t care for others; we freely tease and harm others if we can escape getting caught/punished; we want to please our Lord by doing Naat-Khaani on loudspeakers even if it does adds to the woes of the neighbours or the sick; we waste natural resources with impunity and do not pay the utility bills; we violate laws, especially the traffic rules; we drive recklessly–one-wheeling on motorbikes is frequently seen; we write advertisements/graffiti on walls especially those of the toilets; we give bribes; we smoke in public places/vehicles; we ridicule the poor; we are intolerant towards others; and suspect and abuse others for nothing; hardly a few amongst us have the courtesy to offer their seat to a woman or an old person in public transport; the heaps of garbage in public parks, sea views, lakes and gardens, waste of food in functions and profuse use of polythene bags in our society display how acutely we lack civic sense. The polythene bags are not only creating health hazards but have the potential to disturb life in cities and destroy agriculture by blocking the sewerage and irrigation systems.

The scourges of extremism and terrorism are extreme manifestations of this lack of civic sense. Extremism has been resulted by the lack of due regard and tolerance for opponents and opposing ideologies. And terrorism is the result of a callous and ruthless mindset which divides the world between “us and them” and where there right of security of life and property is available only to ‘us’ while death is reserved for ‘them’, the opponents. Obviously, a man having civic sense –or regard for the life, honour, peace, happiness and ease of others- can neither be an extremist nor terrorism.

We often see people parking their vehicles in front of ‘No Parking’ signboards and at the footpaths. Materialism, terrorism, sectarianism, extremism, intolerance, racism, mud- slinging and quarrelling on petty issues, a mad race to excel others in money and prestige and disregard for the rule of law are both causes and manifestations of this lack of civic sense. Instead of listening carefully and respectfully to what others say, most of us resort to taunting and vandalism. As a nation, it seems, we are ruled more by our emotions than mind.

We claim having a strong culture of discipline and decency but then our people forget everything when it comes to eating and swarm the food in festivals and programmes.

WHY DO PAKISTANIS LACK CIVIC SENSE?

The familiar stereotyped perception is that the illiterate and the poor have no civic sense but it is erroneous to associate the lack of civic sense to wealth or poverty as the rich and the mighty also display lack of civic sense. For example, they delay flights with complete disregard for other passengers.

Lack of civic sense could be either due to lack of education and awareness. It could also be resulted by the lack of sensitivity and disregard for one’s obligations either for sheer arrogance or for the fact that there is monitoring/accountability structure in a given society that is required for forcing compliance to law. It is rightly said that people who have no sense of duties also have no civic sense and they usually violate not only laws but ethical obligations as well.

Then, we Pakistanis are always in a hurry so lining up and waiting for one’s turn is rarely seen. Again, materialism is fuelling the mad race for self-aggrandisement and account for the vices of corruption, nepotism, favouritism and other malpractices in government departments and private/public dealings.

Many dream of bringing change in Pakistan. But hardly a few are ready to change themselves. We want to bring change but only by criticising/correcting others. We are least prepared for introspection and self-reformation. The basic principle –that we cannot bring change unless we change ourselves, our attitudes and our mindsets –is generally forgotten

There is a memorable quote that best describes our style of religiosity. It read: “Pakistan is facing problems because everyone here wants a hearty share from the temporal bounties for himself/herself but is worried for the life-hereafter of others”.

The media, the intelligentsia and the education curricula could have been more helpful in bringing home the importance of civic sense. It has, unfortunately, been neglected thus far.

WHAT IS NEEDED FOR PROMOTING CIVIC SENSE?

NOT GOVERNMENT ALONE?

All responsibilities and tasks should not be left to government. Citizens need to perform their due role in each walk of life. We will have to shun the mentality that we have the right to throw garbage and spit anywhere and that it is the government’s duty to clean it.

INTROSPECTION AND SELF-IMPROVEMENT

For things to change, we must change. For things to get better, we must get better. We need to change ourselves first if we want change, reform and improved services. Setting a good example is better than teaching/preaching others what to do and what not to do. The Quran also declares: “Do you ask others to do the right things and forget about yourself?”

EMPATHY

We must be empathic. Empathy is trying to feel what somebody else is feeling or look at something through someone else’s eyes so as to understand, help and console him/her if needed. We should always have capacity and penchant to put ourselves in other place and think what would I have felt if this and that had been done to me. We need to be more civilized and caring for others. He/she must respect and facilitate others at home, schools, offices, hospitals, parks, transport and thoroughfares and in dealings, interactions, engagements and functions.

RIGHTS IMPLY DUTIES

It must never be forgotten that rights imply duties. Our rights are duties for others and others’ rights are duties for us. If we have a right to good, clean and peaceful environment, resources, security of life and property, and to be treated respectfully, these rights also imply duties on our part towards others. We must remember that every citizen has the right to enjoy civic amenities like drinking water, electricity, transport facilities etc. It is the duty of every citizen to use these civic amenities properly/carefully and pay the bills and other taxes imposed by the government so that welfare –development and repair/maintenance expenditures of public facilities –could be financed.

CONCERTED EFFORTS BY DIFFERENT STAKEHOLDERS

Different stakeholders –government, law enforcement agencies, media, religious scholars, civil society, professionals, the intelligentsia, and all others –should be involved and need to play their roles in promoting civic sense among the people.

ADVOCACY/ AWARENESS CAMPAIGNS

There is a great need to educate/motivate people, organize training sessions, and run advocacy campaigns. There print and electronic media, the ulema, the civil society and the intelligentsia should spread more awareness on the demands of urbanisation, social ethics and conservation of natural resources and our duties as predecessors to our successors –the next generations.

INCORPORATING CIVIC SENSE IN TEXTBOOKS

Government should include reading material regarding civic sense in textbooks. By educating the youngsters in schools through textbooks, pictures and videos on civic sense, we will not only be making him a better human being but also help rebuilding the country.

PICTURES AND VIDEOS ON CIVIC SENSE

Media could promote civic sense by telecasting/broadcasting short clips about positive and negative behaviours. There are quite a lot of useful and impressive videos already available on the internet on civic sense. In one of them, a person spit in front of neighbour’s door. The neighbour cleans it daily and smiles back whenever the guilty one passes by. At last, the guilty person repents and gives up the bad habit. In another, four youngsters dirty a wall. Usually, passersby warn and try to beat the boys and they disappear but reappear soon to start dirtying the wall again. This practice goes on until a boy with civic sense appears. He brings water and duster to cleanse the wall dirtied by the boys. He is soon joined by many passersby in his effort. At last, the trouble-makers too come and help wash/cleanse the wall.

COMPETITIONS ON CIVIC SENSE BETWEEN PERSONS, TOWNS, CITIES

The government and civil society should announce competitions on different aspects of civic sense like cleanliness, courtesy, humility, cooperation, following the law, paying taxes, helping the needy, caring for others, respecting others, tolerance, awareness and sensitivity to others’ rights, sense of duty and service to humanity etc. These competitions could be used to ascertain and reward the person with the best civic sense in offices, departments, institutions, localities. Similarly, this competition could be used to determine the best cities, villages, wards, Union councils, tehsils and districts on any of the above aspects.

BAN ON POLYTHENE BAGS

As regards the abundant use of polythene bags, the government should prohibit the carrying of daily items in plastic bags. The ban is already there but it needs to be implemented.

BAN ON ONE-WHEELING

One-wheeling has resulted in countless tragedies but it, nevertheless, continues. It is not only insensitivity for one’s own but also for others’ lives. Merry-making at the cost of human lives cannot be tolerated.

ACCOUNTABILITY MECHANISM

Government should announce that the shopkeepers and residents of a particular locality would have to dump their garbage at identified points only. It must also ensure that if someone is not throwing garbage in its proper place, he/she will have to pay a specific fine. The administration should bring to book the culprits destroying the natural resources and playing havoc with the lives and peace in society.

 

 

Having A Kindness Revolution

We need to have a kindness Revolution in Pakistan and the world.

It will make the world a pleasant place to live in.

And it will make our lives replete with love, tolerance, spirit of sacrifice, respect and peace -things needed more than any thing else.

Let´s begin with our selves and our home, then expanding our area to our relatives, locality,workplace and all.

 

 

PM, children stats contradictory:SC

وزیراعظم اور بچوں کے بیانات میں تضاد ہے : سپریم کورٹ

پاناما لیکس کیس میں سپریم کورٹ کے لارجر بنچ کے سربراہ جسٹس آصف سعید کھوسہ نے کہا ہے کہ معاملہ استثنیٰ کا نہیں بیانات میں تضاد کا ہے ، جدہ فیکٹری کی ملکیت پر باپ اور بیٹے نے الگ الگ بات کی ، والد سچا ہے یا بیٹا۔ وزیر اعظم نے اسمبلی میں کرپشن کے الزامات کا جواب دیا ، پارلیمنٹ کی کارروائی کو شواہد بنانے کے عدالتی حوالے موجود ہیں۔ اسمبلی میں تقریر پر وزیراعظم کو استثنیٰ حاصل ہے۔ نواز شریف کے وکیل کا مسلسل دوسرے روز اصرار ، عدالت کی جانب سے معاملہ استثنیٰ کے بجائے بیانات میں تضاد کا قرار دے دیا گیا۔ باپ اور بیٹے میں سے کون سچا ہے ؟جسٹس آصف سعید کھوسہ کا وکیل سے استفسار ، عدالت نے ویلتھ ٹیکس کی عدم ادائیگی کو ماضی کا حصہ قرار دیدیا۔ وزیر اعظم کے وکیل مخدوم علی خان نے وزیراعظم کو آرٹیکل 66 کے تحت استثنیٰ پر دلائل دوبارہ شروع کئے تو جسٹس آصف سعید کھوسہ نے ریمارکس دیئے کہ نیوزی لینڈ کی عدالت کا فیصلہ موجود ہے کہ پارلیمنٹ میں بحث کو بطور شواہد استعمال کیا جا سکتا ہے۔ جسٹس عظمت سعید نے کہا آرٹیکل 66 کا استحقاق انفرادی نہیں اجتماعی ہے۔ جسٹس عظمت سعید نے کہا دوسرے فریق کا مو¿قف ہے کہ دوسری پارٹی کا موقف ہے کہ وزیر اعظم کی تقاریر میں تضاد ہے ، وزیر اعظم اور ان کے بچوں کا موقف بھی مختلف ہے۔ جسٹس آصف سعید کھوسہ کا کہنا تھا کہ حسین نواز نے انٹرویو میں کہا کہ جدہ میں انہوں نے فیکٹری لگائی ، والد اور بیٹے نے انٹرویو میں الگ الگ بات کی ، والد سچا ہے یا بیٹا۔ اس پر وزیراعظم کے وکیل نے کہا بیٹے یا باپ میں سے کسی ایک کا سچ ثابت کرنا ہو تو وزیر اعظم کو فارغ نہیں کیا جا سکتا۔

%d bloggers like this: